Action
Shaharyar Qureshi
Shaharyar Qureshi کومنٹس

پاکستان کا پہلا قومی ترانہ ایک ہندو شاعر جگن ناتھ آزاد نے قائد اعظم کی فرمائش پر لکھا تھا مگر قائد کی رحلت کے ساتھ ہی ایک مسلمان شاعر کا فارسی ترانہ قومی ترانہ قرار دیا گیا

اے سرزمینِ پاک !
ذرے تیرے ہیں آج ستاروں سے تابناک
روشن ہے کہکشاں سے کہیں آج تیری خاک
تندیِ حاسداں پہ ہے غالب تیرا سواک
دامن وہ سل گیا ہے جو تھا مدتوں سے چاک
اے سرزمینِ پاک!
اب اپنے عزم کو ہے نیا راستہ پسند
اپنا وطن ہے آج زمانے میں سربلند
پہنچا سکے گا اسکو نہ کوئی بھی اب گزند
اپنا عَلم ہے چاند ستاروں سے بھی بلند
اب ہم کو دیکھتے ہیں عطارد ہو یا سماک
اے سرزمینِ پاک!
اترا ہے امتحاں میں وطن آج کامیاب
اب حریت کی زلف نہیں محو پیچ و تاب
دولت ہے اپنے ملک کی بے حد و بے حساب
ہوں گے ہم اپنے ملک کی دولت سے فیضیاب
مغرب سے ہم کو خوف نہ مشرق سے ہم کو باک
اے سرزمینِ پاک!
اپنے وطن کا آج بدلنے لگا نظام
اپنے وطن میں آج نہیں ہے کوئی غلام
اپنا وطن ہے راہ ترقی پہ تیزگام
آزاد، بامراد، جواں بخت شادکام
اب عطر بیز ہیں جو ہوائیں تھیں زہرناک
اے سرزمینِ پاک!
ذرے تیرے ہیں آج ستاروں سے تابناک
روشن ہے کہکشاں سے کہیں آج تیری خاک
اے سرزمینِ پاک

بحث میں شامل ہونے کے لیے یہاں کلک کریں۔ کومنٹس پڑھیں پرنٹ کریں

9 کومنٹس

Haseeb Khan

Shaharyar Qureshi

Ahmed Jehangir

Ahmed Jehangir

Ahmed Khalil Jazim

Shaharyar Qureshi

Shaharyar Qureshi

Warsha Akhtar

Haseeb Khan


بحث میں شامل ہونے کے لیے یہاں کلک کریں۔