Action
Syed Fawad Bokhari
Syed Fawad Bokhari کومنٹس

ایک اہم نکتہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میرا اپنا بھی زاتی مشاہدہ رھا ھے کہ فیس بک پہ ایسے بھی کئی گروپس ہیں کہ جہاں مزہب کو تضحیک کا نشانہ بنایا جاتا ھے۔ جسکا ایک فطری نتیجہ نفرت، غصہ اور مزاحمت ھے۔ اور اسکی دلیل یہی ھے کہ رد عمل کا زمہ دار عمل ھوتا ھے نہ کہ رد عمل۔ ھو سکتا ھے کہ رد عمل عمل کے لحاظ سے سخت ھو یا سخت ترین ھو، مگر جب عمل جان بوجھ کے ایسا ھو کہ جسکا رد عمل یہ ھو، تو عمل کرنے والے کو بھی، کچھ نہ کچھ، زمہ داری اُٹھانی ھو گی۔ اور میں یہ محسوس کر رھا ھوں، کہ فیس بک پہ موجود اس ڈائینیمکس کے نتیجے میں مذہب اور مزہب کے ماننے والوں کو دفاعی اور بعض اوقات حملہ آورانہ دفاع کی حالت میں ھونا پرتا ھے، کہ جسکی کی ایک وجہ تو مذہب کو تضحیک کا نشانہ بنانے کی روش اور تمخسرانہ انداز بیان ھے۔

میں خود فیس بک پہ تمام گروپس پہ نیا ھوں، میری آمد خود تقریبا پانچ مہنیے پہلے ہی ان گروپس پہ ھوئی ھے۔ اور اس دوران چند بہترین حضرات سے نیٹ ملاقات کا شرف حاصل ھوا ھے۔ اور ان میں سے کئی اس گروپ پہ بھی موجود ہیں۔ اور اُن حضرات کی موجودگی کی وجہ سے خاص کر اور مکالمہ گروپ کا انتظام سمبھالنے کے حوالے سے عمومی طور پر میں یہ وثوق سے کہ سکتا ھوں، کہ اس گروپ پہ ایسا ھونے کی صورتحال تقریبا معدوم ھے ۔

لہذا یہاں پر میری گزارش ھو گی کہ براہے کرم کوئی یہ نہ سمجھے کہ کسی کا استدلال یا بات کسی کو تضحیک کا نشانہ بنانے کی نیت سے ھے۔ سب ہی سیکھنے کی غرض سے ہیں۔ دوسرا یہ کہ خوش قسمتی سے ادب جیسے لظیف دائیرہ سوچ سے تعلق رکھنے والے لوگ ہیں، کہ جنکی موجودگی میں ،مجھے یقین ھے کہ، ہمیشہ ادب کے پیرائے میں ہی معاملات آگے چلیں گے۔

دوسرا اہم نکتہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مجھے جناب حمید نیازی صاحب کی ایک پوسٹ پہ کیے گئے، بہترین، کومینٹ یاد آرھے ہیں کہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہاں، اس گروپ پہ،شایئد کوئی بھی ایسا نہیں ھے کہ جس نے اپنے گھر میں مذہب میں پروان نہ چڑھی ھو، اور یہاں پہ آنے کا مقصد صرف استدلال ھے اور پھر اس استدلال کی بدولت سیکھنا اور اطمنان خاصل کرنا ھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اسی بات کو آگے بڑھاتے ھوئے، سب ممبران سے دلی گزرش کروں گا کہ

مذہبی افراد کے لیے تو عین سنت ابراہیمی پہ عمل ھے کہ جس کے تحت، ایک اولولعزم نبی اور رسول ھونے کے ناطے بھی (حق الیقین کیلیے)، انہوں نے خدا تک سے مشاہدہ طلب کیا اور استفسار کرنے پہ فرمایا کہ میں اپنا اطمنان قلب چاہتا ھوں۔

یقین مانیئے اگر خدا نے اس وقت حضرت ابراہیم کو صحف ابراہیم سے جواب دیا ھوتا، تو پھر تو یہ بات کی جاسکتی تھی کہ مذہب کی بنیاد میں استدلال یا مشاہدہ نہیں، مگر حضرت ابراہیم کو صحف ابراہیم سے جواب دینے کی بجائے مشاہدہ کروانا، یہ ثبوت ھے کہ استدلال جاننا سنت رسول ھے اور اطمنان قلب خاصل کرنا عین انسانی حق ھے۔ اور خاص کر کر خدا سورۃ الفتح میں فرماتے ہیں کہ

لا سنۃ اللہ تبدیلا

خدا اپنی سنت نہیں بدلتا، تو وہ حق جو انسان کو حضرت ابراہیم کے دور میں تھا وہ اب بھی خاصل ھے، اور خاص کر جب خدا سورہ فرقان میں، عبادالرحمن (یعنی رحمان کے بندوں کا زکر کرتے ھوئے) فرما رھا ھے کہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اندھے ، بہروں کی طرح نہیں گر پڑتے چاہے خدا کی آیت ہی کیون نہ سمجھائی جا رہی ھو۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لہذا اس کومینٹ کی مد میں سب ممبران سے دلی گزارش کروں گا، کہ یہاں سب وہ ہیں کہ جو سیکھنے آئے ہیں، اور میں قبلہ حمید نیازی صاحب کی خوبصورت ترین بات کا پیغام سب تک پہنچاوں گا کہ کہ کوئی بھی کسی کو سوال اور تحقیقی جستجو کی بنا پہ لا دین یا ملحد یا باغی، یا جاہل، یا فاسق، یا گمراہ ہر گز نہ کہے۔ اور اگر بلفرض کسی کے بارے میں کسی کی ایسی رائے ھے اور اُسے مخاطب کرنا مقصود ھو تو، تحقیری جملے نہ کہے بلکہ جو کہے وہ صرف اور صرف استدلال ھو۔ مجھے، اس مد میں، قران کے الفاظ یاد آرھے ہیں کہ جسکا مفہوم کچھ یہ ھے

اے رسول (رحمت للعالمین ﷺ) اگر آپ (بھی) ان (کفار) سے سختی سے بات کرے تو (آپکے رحمت للعالمین ھونے کے باوجود) یہ (کفار) آپکی بات نہ سنتے۔

لہذا جب خضور اکرم تک کو بات نرمی سے کرنے کی تاکید ھے، تو ان کو ماننے والوں کو نرمی کا دامن نہیں چھوڑنا چاہیئے۔

بحث میں شامل ہونے کے لیے یہاں کلک کریں۔ کومنٹس پڑھیں پرنٹ کریں

25 کومنٹس

Arshad Mehmood

Abrar Jan

Farhana Sadiq

Farhana Sadiq

Asad Ghafoor

Syed Fawad Bokhari

Syed Fawad Bokhari

Syed Fawad Bokhari

Syed Fawad Bokhari

Asad Ghafoor

Syed Fawad Bokhari

Jamshed Gill

Raja Sumra

Syed Ziauddin Naeem

Syed Ziauddin Naeem

Shaharyar Qureshi

Ahmed Khalil Jazim

Hameed Niazi

Ahmed Khalil Jazim

Syed Asrar Ahmed

Syed Fawad Bokhari

Syed Fawad Bokhari

Syed Fawad Bokhari

Syed Fawad Bokhari

Syed Fawad Bokhari


بحث میں شامل ہونے کے لیے یہاں کلک کریں۔